راجوری میں خونین جھڑپ2 فوجی کیپٹن سمیت چار جوان جاں بحق، جنگلی علاقے میں محصور ملی ٹینٹ زخمی، آپریشن ہنوز جاری

راجوری میں خونین جھڑپ2 فوجی کیپٹن سمیت چار جوان جاں بحق، جنگلی علاقے میں محصور ملی ٹینٹ زخمی، آپریشن ہنوز جاری

جموں: جموں وکشمیر کے راجوری ضلع کے کالاکوٹ باجی جنگلی علاقے میں سیکورٹی فورسز اور ملی ٹینٹوں کے مابین جاری تصادم میں دو فوجی آفیسروں سمیت چار جوان جاں بحق ہوئے جبکہ ایک فوجی کی حالت نازک بنی ہوئی ہے۔دفاعی ترجمان نے بتایا کہ جنگل میں موجود دہشت گرد جوابی کارروائی کے دوران زخمی ہوئے اور انہیں مار گرانے کی خاطر محاصرہ وسیع کیا گیا ہے۔ذرائع نے بتایا پولیس ، فوج اور سی آر پی ایف کے سینئر آفیسران بھی ہنگامی طورپر جائے موقع پر پہنچے۔اطلاعات کے مطابق راجوری کے جنگلی علاقے کالاکوٹ باجی میں ملی ٹینٹوں کے چھپے ہونے کی ایک خاص اطلاع موصول ہونے کے بعد سیکورٹی فورسز نے بدھ کی صبح علاقے کو محاصرے میں لے کر تلاشی آپریشن شروع کیا۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ جوں ہی سلامتی عملے کے اہلکار مشتبہ مقام پر پہنچے تو وہاں پر موجود ملی ٹینٹوں نے اندھا دھند فائرنگ شروع کی چنانچہ سیکورٹی فورسز نے بھی پوزیشن سنبھال کر جوابی کارروائی کا آغاز کیا جس دوران شدید گولیوں کا تبادلہ شروع ہوا۔

ذرائع نے بتایا کہ ملی ٹینٹوں کی ابتدائی فائرنگ میں 2 سینئر آفیسر اور پیرا رجمنٹ سے وابستہ تین اہلکار شدید طورپر زخمی ہوئے جنہیں فوری طورپر فوجی ہسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہاں پر تعینات ڈاکٹروں نے دو فوجی کیپٹن سمیت چار جوانوں کو مردہ قراردیا جبکہ اور ایک اہلکارکی حالت بھی نازک بنی ہوئی ہے۔

دریں اثنا پولیس ، فوج اور سی آر پی ایف کے سینئر آفیسران فوری طورپر راجوری پہنچے جو اس آپریشن کی از خود نگرانی کر رہے ہیں۔ذرائع نے بتایا کہ فوجی کیپٹن کی ہلاکت کے بعد سیکورٹی فورسز کی بھاری جمعیت نے راجوری کے جنگلی علاقے کو محاصرے میں لے کر فرار ہونے کے سبھی راستوں پر پہرے بٹھا دئے۔انہوں نے بتایا کہ سراغ رساں کتوں کی مدد سے جنگلی علاقے میں تلاشی لی جارہی ہیں تاکہ ملی ٹینٹوں کو فرار ہونے کا کوئی موقع فراہم نہ ہو سکے۔ذرائع کے مطابق جنگلی علاقے میں محصور ملی ٹینٹوں کو مار گرانے کی خاطر ہیلی کاپٹروں کی بھی خدمات حاصل کی گئی ہیں۔دفاعی ذرائع کا کہنا ہے کہ راجوری کے جنگلی علاقے میں دو سے تین ملی ٹینٹ موجود ہو سکتے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ فوج نے مصدقہ اطلاع ملنے کے بعد جنگلی علاقے کو محاصرے میں لے کر تلاشی آپریشن شروع کیا تو اسی اثنا میں ملی ٹینٹوں نے فورسز پر گھات لگا کر حملہ کیا جس کے نتیجے میں آرمی کیپٹن سمیت کئی اہلکار زخمی ہوئے۔ان کے مطابق ڈرون کیمروں کے ذریعے جنگلی علاقے پر نظر گزر رکھی جارہی ہیں جبکہ لوگوں سے تلقین کی گئی ہے کہ آپریشن کے اختتام تک وہ جنگلی علاقے کی اور جانے سے گریز کریں۔فوج کے وائٹس نائٹ کارپس نے بدھ کی شام کو ایکس پر جانکاری فراہم کرتے ہوئے بتایا:”راجوری کے کالاکوٹ جنگلی علاقے میں موجود ملی ٹینٹ فوج کی جوابی کارروائی میں زخمی ہوئے ہیں اور انہیں مار گرانے کی خاطر محاصرے کا دائرہ وسیع کیا گیا۔“یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ امسال جموں کے تین اضلاع راجوری ، پونچھ اور ریاسی میں 13سیکورٹی فورسز کے اہلکاراور 22ملی ٹینٹوں سمیت 45افراد مارے گئے ہیں۔امسال ضلع راجوری میں مختلف تصادم آرائیوں کے دوران 20ملی ٹینٹ،چھ فورسز اہلکار ہلاک ہوئے۔ اسی مدت کے دوران پونچھ ضلع میں 15ملی ٹینٹ اور پانچ فوجی جوان از جان ہوئے جبکہ ریاسی ضلع میں تین دہشت گرد مارے گئے۔بتادیں کہ گڈول کوکر ناگ میں ہوئے تصادم جس میں سیکورٹی فورسز کے تین اعلیٰ آفیسران جاں بحق ہوئے تھے کے بعد یہ اپنی نوعیت کاایسا دوسرا آپریشن ہے جس میں فوج کو جانی نقصان ہوا ہے۔

یواین آئی

Leave a Reply

Your email address will not be published.