نریندر مودی کی ریکارڈ تیسری مرتبہ بطور وزیراعظم آج شام حلف برداری

نریندر مودی کی ریکارڈ تیسری مرتبہ بطور وزیراعظم آج شام حلف برداری

دہلی میں تیاریاں مکمل ،کابینہ کے خدوخال کو حتمی شکل دینے کیلئے فیصلہ کن مشاورت،بھاجپا کی اہم وزارتیں برقرار

سری نگرنامزد وزیر اعظم نریندر مودی آج یعنی9جون 2024بروز اتوار کو مسلسل تیسری مدت کےلئے حلف اُٹھانے والے ہیں، جو پہلے وزیر اعظم جواہر لعل نہرو کے کارنامے کے برابر ہیں،تاہم جواہر لعل نہرﺅ1947تا1964 مسلسل 3مرتبہ یعنی17سال تک وزیراعظم کے عہدے پر فائض رہے تھے۔ بی جے پی کی قیادت اور اتحادی جماعتوں کے سینئرلیڈران کے درمیان NDAمیں شامل مختلف پارٹیوں کو کابینہ میں وزارتوں کی تقسیم کے معاملے پر گفت وشنید جاری رہی ۔وزیراعظم مودی نے جمعہ کو صدر سے ملاقات کے بعد کہاتھاکہ وہ وزارتی کونسل کی لسٹ حلف برداری سے قبل صدرکو ارسال کریں گے۔ مانٹرینگ ڈیسک کے مطابق نامزد وزیر اعظم نریندر مودی کی مسلسل تیسری مرتبہ حلف برداری سے ایک دن قبل بی جے پی کے سینئر قائدین جیسے مرکزی وزراءامت شاہ اور راج ناتھ سنگھ کے علاوہ پارٹی صدر جے پی نڈا اتحادیوں بشمول تیلگو دیشم پارٹی کے این چندرابابو نائیڈو، جے ڈی (یو) کے نتیش کمار اور شیوسینا کے ایکناتھ شندے سے حکومت میں نمائندگی کیلئے اپنے حصہ کو حتمی شکل دینے کےلئے فیصلہ مشاورت کرتے رہے۔ایک خیال ہے کہ اہم ترین وزارتوں جیسے داخلہ، خزانہ، دفاع اور خارجہ امور کے علاوہ تعلیم اور ثقافت، مضبوط نظریاتی رنگوں والی دو وزارتیں بی جے پی کے پاس رہیں گی، جب کہ اس کے اتحادیوں کو پانچ سے آٹھ وزارتوں میں جگہ مل سکتی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق جہاںامت شاہ اورراج ناتھ سنگھ جیسے لیڈروں بشمول نتن گڈکری کو پارٹی کے اندر نئی کابینہ میں یقین کے طور پر دیکھا جا رہا ہے، وہیں سابق وزیر اعلی جیسے شیوراج سنگھ چوہان، بسواراج بومائی، منوہر لال کھٹر اور سربانند سونووال،جنہوں نے لوک سبھا انتخابات میں کامیابی حاصل کی ہے، حکومت میں شامل ہونے کے مضبوط دعویدار ہیں۔ ٹی ڈی پی کے رام موہن نائیڈو، جے ڈی (یو) کے لالن سنگھ، سنجے جھا اور رام ناتھ ٹھاکر، اور لوک جن شکتی پارٹی (رام ولاس) کے چراغ پاسوان ان حلیفوں میں شامل ہیں، جو نئی حکومت کا حصہ بن سکتے ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ لالن سنگھ یاسنجے جھا میں سے کسی ایک کو جے ڈی (یو) کوٹے سے جگہ دی جائے گی۔مہاراشٹر، جہاں بی جے پی،شیو سینا،این سی پی اتحادنے خراب کارکردگی کا مظاہرہ کیاہے، اور بہار، جہاں اپوزیشن نے بحالی کے آثار دکھائے ہیں، حکومت سازی کی مشق کے دوران توجہ مرکوز کر سکتے ہیں۔مغربی ریاست میں اکتوبر میں اسمبلی انتخابات ہونے والے ہیں، جب کہ بہار میں اگلے سال انتخابات ہوں گے۔بی جے پی کی تنظیم میں آنے والی تبدیلیاں بھی پارٹی کے وزراءکے ناموں کو حتمی شکل دینے میں اس کے دماغی اعتماد کے ذہن میں ہوں گی۔جے پی نڈا کی میعاد میں لوک سبھا انتخابات کی وجہ سے توسیع کی گئی تھی، اور پارٹی کے لیے تنظیمی ضروریات ایک اہم غور طلب ہوں گی کیونکہ انتخابی نتائج نے یہ اشارہ دیا ہے کہ اس کی وسیع مشینری میں سب کچھ ٹھیک نہیں ہے۔ذرائع نے بتایا کہ اس سے پارٹی میں کچھ تجربہ کار ہاتھ بھیجے جانے اور نڈا کو حکومت میں جگہ ملنے کا امکان کھل جاتا ہے۔بی جے پی تسلسل کا پیغام بھیجنے اور لوک سبھا انتخابات میں اس کے حیران کن کم کارکردگی کے بعد سیاسی کمزوری کے کسی بھی تاثر کو دور کرنے کی خواہشمند ہے کیونکہ اس کی نشستوں کی تعداد 303 سے240 تک گر گئی، جو کہ 272 کے اکثریتی ہندسے سے کافی کم ہے۔ایک میڈیارپورٹ کے مطابق اس بار بی جے پی کو اپنے بل بوتے پر واضح اکثریت نہیں ملی ہے۔ اب اسے حکومت چلانے کے لئے اپنے این ڈی اے اتحادیوں پر انحصار کرنا پڑے گا۔ اس کا اثراتوارکو ہونے والی حلف برداری کی تقریب میں حلف اٹھانے والے وزراءکی فہرست پر بھی دیکھا جا سکتا ہے۔ اس بار یہ ممکن ہے کہ بی جے پی کوٹے سے وزراءکی تعداد کم ہو اور این ڈی اے اتحادیوں کے وزراءکی تعداد بڑھ جائے۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ بی جے پی کے کئی وزیر الیکشن ہار چکے ہیں۔ ان میں اسمرتی ایرانی اور آر کے سنگھ بھی شامل ہیں۔ذرائع کے مطابق سری کاکولم لوک سبھا حلقہ سے 3 بار تیلگو دیشم پارٹی (ٹی ڈی پی) کے رکن پارلیمنٹ رام موہن نائیڈو کو وزیر اعظم نریندر مودی کی مرکزی کابینہ میں شامل کیے جانے کا امکان ہے۔ ٹی ڈی پی کو مودی کابینہ میں ایک کابینی وزیر کا عہدہ ملنے کی امید ہے۔ اس کے علاوہ2 وزیر مملکت عہدہ بھی ملیں گے۔ حالانکہ پارٹی نے چار عہدوں کا مطالبہ کیا ہے۔دو کابینہ اور دو وزیر مملکت کے عہدے۔ اس کے علاوہ پارٹی کو ڈپٹی اسپیکر کے عہدے کی پیشکش کئے جانے کا امکان ہے۔اسی طرح جنتا دل (یو) بھی اس بار وزارتوں کے لیے سودے بازی سے پیچھے نہیں ہٹے گی۔ جے ڈی یو کے کئی لوگ بھی وزیر بننے کی دوڑ میں ہیں۔ جن میں للن سنگھ اور کے سی تیاگی سب سے اہم مانے جاتے ہیں۔ تاہم جے ڈی یو کوٹے سے کون وزیر بنے گا اس کا حتمی فیصلہ پارٹی سربراہ اور بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار کے ہاتھ میں ہے۔ لیکن یہ طے ہے کہ نتیش کمار کابینہ میں بڑا حصہ چاہتے ہیں۔اسی طرح بہار سے این ڈی اے میں شامل چراغ پاسوان اور جیتن رام مانجھی بھی حلف اٹھانے والوں میں شامل ہو سکتے ہیں۔ اپنا دل کی انوپریہ پٹیل بھی حلف اٹھا سکتی ہیں۔ آندھرا پردیش کے پون کلیان کو جو اہمیت ملی ہے اس کی وجہ سے یہ یقینی سمجھا جارہا ہے کہ وہ بھی وزیر بننے جارہے ہیں۔وہیں بی جے پی کی طرف سے وزیر کے طور پر حلف اٹھانے کے لئے یقینی سمجھے جانے والوں میں کئی اہم شخصیات کے نام شامل ہیں۔ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ، وزیر داخلہ امت شاہ، وزیر خارجہ ایس جے شنکر، پیوش گوئل، ہردیپ سنگھ پوری، انوراگ ٹھاکر، ارجن رام میگھوال، پرہلاد جوشی اور منسکھ منڈاویہ ایسے نام ہیں جن کا حلف اٹھانا تقریبا یقینی مانا جارہا ہے۔حکومت نے ہفتے کے روز اعلان کیا کہ کئی پڑوسی ممالک بشمول بنگلہ دیش، سری لنکا، نیپال، بھوٹان، مالدیپ اور ماریشس کے رہنما حلف برداری کی تقریب میں شرکت کریں گے۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.