این ایچ آر سی نے مقتول کشمیری شاعر کے کیس کو عدالت عالیہ کا فیصلہ آنے تک التوا میں رکھا

این ایچ آر سی نے مقتول کشمیری شاعر کے کیس کو عدالت عالیہ کا فیصلہ آنے تک التوا میں رکھا

سری نگر: قومی انسانی حقوق کمیشن (این ایچ آر سی) نے اپنی رجسٹری کو ہدایت دی ہے کہ وہ معروف کشمیر شاعر سرو آنند کول پریمی کے کیس کو جموں وکشمیر ہائی کورٹ کا فیصلہ آنے تک التوا میں رکھے۔

بتادیں کہ 65 سالہ سر آنند پریمی کو اپنے 27 سالہ بیٹے وریندر کول سمیت مئی سال 1990 میں جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں واقعع اپنے آبائی گاﺅں میں ابدی نیند سلا دیا تھا۔واقع پیش آنے کے ایک فہتے کے بعد ان کا خاندان کشمیر چھوڑ گیا تھا۔ادب میں ان کے کارناموں کے اعزاز میں انہیں سال 2022 میں لائف ٹائم اچیو منٹ ایوارڈ سے سرفراز کیا گیا تھا۔اںجہانی سر آنند پریمی کے بیٹے راجندر پریمی نے این ایچ آر سی میں ایک شکایت درج کی تھی جس میں حکومت پر سابقہ جموں وکشمیر انسانی حقوق کمیشن کی سفارشات کو لاگو کرنے میں تاخیر کرکے دہشت گردی سے متاثرہ کنبے کی حالت زار سے بے حسی برتنے کا الزام لگایا گیا تھا۔این ایچ آر سی نے 18 اکتوبر کو جاری اپنے ایک آرڈر میں کہا کہ اس معاملے میں ہائی کورٹ کا حتمی فیصلہ آنے تک انتظار کرنا بہتر ہوگا۔

این ایچ آر سی کی یہ ہدایات ڈپٹی سکریٹری ہوم جموں وکشمیر کی طرف سے کمیشن میں اضافی رپورٹ پیش کرنے کے بعد دی گئیں۔جموں وکشمیر حکومت نے استدعا کی تھی کہ حکومت کی طرف سے ہائی کورٹ میں دائر رٹ پٹیشن کا نتیجہ آنے تک اس معاملے کو التوا میں رکھا جائے۔جموں وکشمیر حکومت کا کہنا ہے: ‘اس کمیشن کے مشاہدے کے متعلق کہ سابقہ ایس ایچ آر سی کے مورخہ 22 فروری 2012 کے فیصلے/ سفارش کو سٹیٹ کی طرف سے اب تک کوئی چیلنج نہیں کیا گیا ہے اور اسی وجہ سے اس نے حتمی شکل اختیار کی ہے’۔

انہوں نے کہا: ‘اس بات کی تصدیق کی جا رہی ہے کہ جموں و کشمیر اور لداخ کے ہائی کورٹ کی ڈویڑن بینچ نے کیس بعنوان او ڈبلیو پی نمبر 1756/2018 بعنوان ریاست جموں وکشمیر بمقابلہ جموں و کشمیر انسانی کمیشن و دیگر موقف اختیار کیا تھا کہ سابقہ ریاستی کمیشن کی سفارش / فیصلے کو چیلنج کرنے کی ضرورت نہیں ہے’۔کمیشن نے مشاہدہ کیا کہ عدالت عالیہ کی طرف سے نہ ہی ‘سٹے’ کو منظوری ملی ہے نہ ہی کمیشن کو کوئی نوٹس جاری کی گئی ہے۔کمیشن نے کہا: ‘اس مرحلے پر اس معاملے میں عدالت عالیہ کی طرف حتمی فیصلہ آنے تک انتظار کرنا بہتر ہوگا’۔دریں اثنا کمیشن نے جموں و کشمیر کے چیف سکریٹری کو ہدایت دی ہے کہ وہ آٹھ ہفتوں کے اندر ہائی کورٹ کیس کے تازہ ترین سٹیٹس کو پیش کرے۔

یو این آئی

Leave a Reply

Your email address will not be published.