شہدائے کشمیر کو خراج عقیدت پیش کرنے سے روکنا جمہویت کا قتل، پاکستان کے ساتھ مذاکرات ناگزیر : ڈاکٹر فاروق عبداللہ

شہدائے کشمیر کو خراج عقیدت پیش کرنے سے روکنا جمہویت کا قتل، پاکستان کے ساتھ مذاکرات ناگزیر : ڈاکٹر فاروق عبداللہ

سری نگر،13 جولائی:نیشنل کانفرنس کے سرپرست اعلیٰ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے بدھ کے روز کہاکہ جموں وکشمیر میں امن و امان اُسی صورت میں ممکن ہے جب تک یہاں کے عوام کے دلوں کو جیتا جائے اور پڑوسی ملک کیساتھ بات چیت کا عمل شروع کیا جائے۔
ان باتوں کا اظہارموصوف نے پارٹی ہیڈ کواٹر پر یوم شہدا کے سلسلے میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔
ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ مقامی حکومت اور مرکز کے بڑے بڑے لیڈران آئے روز یہ بیانات دیتے ہیں کہ ملی ٹنسی ختم ہوگئی ہے لیکن زمینی سطح پر اس میں روز بہ روز اضافہ ہوتا جارہاہے، کل ہی ایک پولیس افسر کو ابدی نیند سلا دیا گیا جبکہ دیگر دو اہلکاروں کو زخمی کیا گیا۔ یہاں کے حالات اُس وقت تک ٹھیک نہیں ہونگے جب تک کشمیریوں کے دلوں کو جیتنے کی کوشش نہیں کی جائے گی۔
انہوں نے کہا کہ ”میں ان سے (مرکز سے)بار بار کہتا ہوں، جب تک آپ جموں وکشمیر کے عوام دلوں کو جیتنے کی کوشش نہیں کرو گے آپ کبھی کامیاب نہیں ہونگے، کرو جو کرنا ہے، بناﺅ جو بنانا ہے، ایک دن یہ سب مسمار ہوجائے گا اور میں یہ یقین کے ساتھ کہہ سکتا ہوں“۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ جب تک کشمیریوں کے دلوں کو جیتنے کی کوشش اور پڑوسی ملک کیساتھ بات چیت کرکے اس مسئلے کا حل نہیں ڈھونڈا جائے گا ، ہم لوگ اس میں پستے جائیں گے، مرتے جائیں گے ۔
شہدائے وطن کو خراج عقیدت پیش کرنے سے روکنے کی حکومتی اقدامات کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ مجھے بے حد افسوس ہے کہ نہ صرف 1931کے شہداءکی چھٹی کو منسوخ کردیا گیا بلکہ کشمیریوں کو انہیں خراج عقیدت، فاتحہ خوانی اور گلباری کرنے سے روکا جارہاہے ۔ کیا یہی جمہوریت ہے؟
انہوں نے بتایا کہ جن لوگوں نے اپنے گرم گرم لہو سے ہمیں سب کچھ دیا ہمیں اُنہیں خراج عقیدت تک پیش کرنے نہیں دیا جارہا ہے۔
ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہاکہ حکمرانوں کی بدنیتی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ سٹیٹ الیکشن سے منسلک تمام دفاتر سے مسلمانوں افسران اور ملازموں کو منتقل کیا جارہاہے۔
انہوں نے کہا کہ میں دعا کرتا ہوں کہ سری لنکا کے لوگوں کو موجودہ مصیبت کے دور سے نجات دے اور اُمید کرتا ہوںکہ ہماری حکومت سری لنکا کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے ایسے اقدامات اُٹھائے کہ کہیں ہمارا ملک بھی اس طرف نہ جائیں۔
مسٹر عبداللہ نے کہا کہ حکومت تعمیر و ترقی اور روزگار کی فراہمی کے دعوے کررہی ہے لیکن زمینی سطح پر لوگ بے روزگاری، بے کاری اور غریبی میں پس رہے ہیں۔ حکومت کے تمام دعوے زمینی سطح پر جھوٹ اور فریب ثابت ہوتے ہیں۔
انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ اتحاد اور اتفاق میں رہیں کیونکہ اسی میں کامیابی کا راز مضمر ہے، ہم اس وقت ایک مشکل ترین دور سے گزر رہے ہیں اور اتحاد و اتفاق ہی ہمیں موجودہ دور سے نکال سکتا ہے۔مایوس ہونے کی ضرورت نہیں، ہمیشہ اللہ تعالیٰ سے اُمید رکھنی چاہئے۔یو این آئی

Leave a Reply

Your email address will not be published.